آگم ڪيو اچن...

عنوان ملوڈیز آف شاھ عبداللطیف بھٹائی
شارح / محقق آغا سليم
ڇپائيندڙ ثقافت کاتو، حڪومتِ سنڌ
ڇپجڻ جي تاريخ 2015-01-01
ايڊيشن 2

فھرست

سر کلیان

پہلی داستان
1

اول اللہ علیم، اعلیٰ عالم کا دھنی،
قادر اپنی قدرت سے، قائم اور قدیم،
والی، واحد، وحدہ، رازق رب رحیم،
مدحت کر اس سچے رب کی، کہہ تو حمد حکیم،
وہ والی وہ کریم، وہ جگ کے کام سنوارے۔

[اصل بیت پڑھیں]
2

وَحْدَہٗ لاَشَرِیْکَ لَہٗ، کہہ دے جب اک بار،
محمد(صلعم) ہیں تخلیق کا باعث، پیار سے کر اقرار،
پھر کیوں غیر کے دوار، جا کر سر کو جھکائے۔

[اصل بیت پڑھیں]
3

وَحْدَہٗ لاَشَرِیْکَ لَہٗ، کہا جنہوں ئے یار!
محمد (صلعم) ہیں تخلیق کا باعث، دل سے تھا اقرار،
پہنچے وہ سب پار، کبھی بھی مشکل گھاٹ نہ آیا۔

[اصل بیت پڑھیں]
4

وَحْدَہٗ لاَشَرِیْکَ لَہٗ، کہیں اور ہو ایمان،
محمد (صلعم) ہیں تخلیق کا باعث، مانے قلب و زبان،
یہ فائق کا فرمان، وہ کبھی نہ مشکل گھاٹ گئے۔

[اصل بیت پڑھیں]
5

راہ میں مشکل گھاٹ نہ آیا، ناؤ رہی سالم،
ایک سے مل کر ایک ہوئے ہیں، ایسے سارے عالم،
بن گئے وہ سب بالم، رب کے روزِ ازل سے۔

[اصل بیت پڑھیں]
6

رب نے ان کو روزِ ازل سے، کیا سراپا نُور
لاخوف علیہم ولا ھُم یحزنون، کبھی نہیں رنجُور
عشق میں معمور ، کردیا رب نے روزِ ازل سے۔

[اصل بیت پڑھیں]
7

وہ جو قتیلِ وحدت ہیں اور، لب پر الا اللہ،
جن کو عرفانِ حقیقت، جن کی طریقت راہ،
معرفت کی مہر ہے لب پر، ڈھونڈے دُور نگاہ،
سُکھ سے پل بھی آنکھ نہ جھپکیں، من میں درد اتھاہ،
ان کی عجب ہے چاہ، وہ کاٹیں سر کندھوں سے۔

[اصل بیت پڑھیں]
8

وہ جو قتیل وحدت ہیں اور، الا اللہ کے بسمل،
کہا کہ "برحق محمدﷺٖ ہیں" اور ہو گئے دل سے قائل،
کہے لطیف کہ جس عاشق نے، پائی ہے یہ منزل،
وحدت سے گئے مل، تب رب نے اس کو دھو دیا۔

[اصل بیت پڑھیں]
9

وہ جو قتیل وحدت ہیں اور الا اللہ کے بسمل،
کون ابھاگا ایسا ہو جو، چاہے نہ یہ منزل۔

[اصل بیت پڑھیں]
10

وَحْدَہٗ لاَشَرِیْکَ لَہٗ ، سنا نہیں اے غافل!
باطن کی آواز سے بھی تُو، ہو سکا نہ قائل،
ہوں گے گواہ مقابل، روئے گا تو دن محشر کے۔

[اصل بیت پڑھیں]
11

وَحْدَہٗ لاَشَرِیْکَ لَہٗ، یہ ہی کر بیوپار،
یہی تیری منزل ہے اب، جیت ہو چاہے ہار،
کہیں گے خود سرکار، پی لے جام تو جنت کا۔

[اصل بیت پڑھیں]
12

وَحْدَہٗ لاَشَرِیْکَ لَہٗ، یہ ہے حق یکتائی،
منزل کبھی نہ پائی، دوئی میں جو الجھ گئے۔

[اصل بیت پڑھیں]
13

سر ڈھونڈوں تو دھڑ نہ پاؤں، دھڑ پاؤں تو سر کہاں،
جیسے سرکنڈے کٹتے ہیں، کٹے ہیں ہاتھ اور انگلیاں،
تن من خون افشاں، وصل جنہیں وحدت کا۔

[اصل بیت پڑھیں]
14

عاشق مت کہ اس کو، اور نہ کہ معشوق،
نہ ہی کالق اے ناداں! نہ ہی کہ مخلوق،
بتا نہ رمز سلوک، ناقص اور ناداں کو۔

[اصل بیت پڑھیں]
15

وحدت سے ہی کثرت ہے اور، سب کثرت ہے وحدت،
حق تو حقیقی ایک ہے سائیں! چھوڑ تو سب غفلت،
ہر سُو پی کی نوبت، واللہ باج رہی ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
16

خود ہی جل جلالہٰ، خود ہی جانِ جمال،
خود ہی صورت یار کی، خود ہی حسن کمال،
خود ہی پیر مرید بنے اور، خود ہی یار خیال،
سارا یہ احوال، اپنے آپ میں ڈوب کے پایا۔

[اصل بیت پڑھیں]
17

خود ہی دیکھے خود کو، خود ہی ہے محبوب،
خود ہی خالقِ خوب، خود ہی اس کا طالب۔

[اصل بیت پڑھیں]
18

یہ بھی وہ اور وہ بھی وہ، اِجل بھی وہ اللہ بھی وہ،
پریتم وہ اور جان بھی وہ، دشمن اور پناہ بھی وہ۔

[اصل بیت پڑھیں]
19

ایک صدا ایک گونج، سننے میں ہیں دو
غور سے گر سُن لو، مخرج ان کا ایک ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
20

ایک قصر در لاکھ، اور کروڑوں کھڑکیاں،
جدھر اُٹھے یہ آنکھ، ادھر ہے سندر روپ سجن کا۔

[اصل بیت پڑھیں]
21

ساجن! کیا کیا روپ ہیں تیرے! درشن لاکھ ہزار،
جی جڑے ہیں جی سے سائیں! الگ الگ دیدار،
تیرے روپ ہزار، کیا کیا روپ ہیں دیکھوں۔

[اصل بیت پڑھیں]
وائي

سبھی پریتم کو پوجیں،
اکھین پریت، رسیلی بتیاں، ایسے پی کو سب ہی پوجیں،
جو بھی میرے من میں ہے وہ، تو ہی جانے جاناں!
دو ہی بیت لطیف کوی کے، تیری صدا ہی سجناں!

[اصل بیت پڑھیں]
دوسری داستان
1

دیکھی جب بیماری میری، پیا ہوئے رنجور،
سولی کو اورانگا میں نے، روگ ہوا سب دور۔

[اصل بیت پڑھیں]
2

اندھے نیم حکیم بھلا کیوں، اور تو روگ بڑھائے،
روگ ہے میرے من میں پر تُو، دارو اور پلائے،
سولی سیج سہائے، موت تو پیا ملن کی۔

[اصل بیت پڑھیں]
3

سولی نے ہے بُلایا، کون چلے گی ساتھ
ان سے رہا نہ جائے کریں جو، پیا ملن کی بات۔

[اصل بیت پڑھیں]
4

جن کے من میں پریت ہے ان کو، سولی نے ہے بلایا
پیچھے قدم ہٹا نہ عاشق! گر ہے عشق کا دعویٰ،
کاٹ کے سر تو لے آ، پھر کر باتیں پیار کی

[اصل بیت پڑھیں]
5

سولی روزِ ازل سے، عاشق کا سنگھار
لوٹ کے آنا طعنہ جانیں، سولی پر دیدار،
مرنے کا اقرار۔ ان کا روز ازل سے ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
6

سولی روزِ ازل سے، عاشق کا سنگھار
پاؤں کبھی نہ ان کے لرزے، دیکھ کے بھالے دار،
آن چڑھائے یار! پریت انہیں سولی پر۔

[اصل بیت پڑھیں]
7

سولی پہ یوں سجنا، کیوں کر ہیں مسرور
جب سے لاگے نیناں، تب سے سولی سیج ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
8

سیج سمجھ کر سولی چڑھنا، یہ عشاق کا کام،
رُکیں نہ وہ اک گام، آئیں مقابل سولی کے۔

[اصل بیت پڑھیں]
9

عاشق سولی پہ چڑھتے ہیں، دِن میں سو سو بار،
پریت کی ریت کو بھول نہ جانا، دیکھ کر نیزے دار،
تو دیکھ نہ پایا یار، پریت جہاں سے پھوٹی ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
10

پہلے گھونپ لے خنجر، پھر کر بات پریت کی،
درد سجن کا صورت نغمہ، گونجے دل کے اندر،
انگاروں میں پک کر، پھر لے عشق کا نام۔

[اصل بیت پڑھیں]
11

تیغ پہ کیا الزام، وہ ہے سجن کے ہاتھ میں،
سیکھ ادائیں محبوبوں کی، لرزے تیغ تمام،
دکھ ہی دکھ ہر گام، عاشق کو ہے پریتم کا۔

[اصل بیت پڑھیں]
12

دستِ یار میں خنجر ہے وہ، تیز نہ ہونے پائے،
ہاتھ ذرا رُک جائے، یار کا پل بھر تن پہ۔

[اصل بیت پڑھیں]
13

دستِ یار کے خنجر سے، کٹ کٹ جائے چام،
لے کے یار کا نام، عاشق انگ کٹائیں۔

[اصل بیت پڑھیں]
14

پریت کی ریت جب سیکھی تو پھر، خنجر سے کیا ڈرنا،
پریتم نے جو درد دیا ہے، عام اسے مت کرنا
ہنس ہنس راز میں رکھنا، درد کی اس دولت کو۔

[اصل بیت پڑھیں]
15

کاٹیں گردہ انگ تو آجا، ورنہ راہ لے اپنی،
یہ ہے ان کا دیس کہ جن کے، ہاتھوں میں ہے کٹاری۔

[اصل بیت پڑھیں]
16

ایسے پی سے پریت لگی کہ، ہاتھ میں ہے خنجر
اُلفت کے میدان میں آئیں، کیسا خوف و خطر
آگے رکھ دوں سر، شاید کاٹ لے سجن۔

[اصل بیت پڑھیں]
17

کچھ تو مقتل میں جا پہنچے، باقیوں کی ہے قطار،
تجھ کو قبول کریں گے ہو جا، مرنے کو تیار،
کیا تو دیکھ نہ پایا ان کے، سروں کے ہیں انبار،
سروں کا کاروبار، دیکھ کلال کے ہاٹ پہ ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
18

مے پینا گر چاہے تو پھر، پاس کلال کے جا،
مے کے خُم کے پاس تو جاکر، کاسہ سر کو جھکا،
ایک ہی سانس میں گاڑھی مے کے، جام پہ جام چڑھا،
شہزوروں کے ہوش گنوائے، یہ ہے وہ مدرا،
بھاؤ بڑا سستا، سر دے کر گر مے مل جائے۔

[اصل بیت پڑھیں]
19

جا کلال کے ہاٹ پہ ہے، مے کی خواہش گر،
کہے لطیف کہ سر کو کاٹ کے، مٹکے پاس تو دھر،
سر کا سودا کر، جام پہ جام تو پی کے۔

[اصل بیت پڑھیں]
20

گر ہے مے کی خواہش تو پھر، کوچہ کلال میں جا،
مہیسر، کی مے کا ہر دم، وہاں ہے شور برپا،
رمز میں یہ سمجھا، کہ سر کے بدلے مے سستی ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
21

گر ہے مے کی خواہش تو پھر، گھر کلال کے جا،
کاٹیں تیرا انگ انگ تو، مے کی ریت نبھا،
سودا ہے سستا۔ گر جام ملے جاں دے کر۔

[اصل بیت پڑھیں]
22

مے کا کوئی مول نہیں ہے، مول ملے کب مدرا،
کہے لطیف سر کے کٹوانے کو، سر کو سجا کر لا،
یہ مقام ہے انکا جو مدھ شالا میں مرتے ہیں۔

[اصل بیت پڑھیں]
23

عاشق عادی زہر کے ہیں اور، زہر سے ہیں مسرور،
کڑوا قاتل زہر جو دیکھیں، مستی میں ہوں چُور،
کہے لطیف کہ عشق یار میں، مٹتے ہیں وہ ضرور،
زخموں سے ہیں چُور، کبھی نہ زخم دکھائیں۔

[اصل بیت پڑھیں]
24

کڑوی مے گر پی نہ پائے، مت لے مے کا نام،
جان رگوں سے کھینچے یہ مے، لرزاں جسم تمام،
چکھ لے کڑوا جام، سر دے کر تو پی لے گھونٹ۔

[اصل بیت پڑھیں]
25

جو بس خواہش کرنا جانیں، لیں کیوں مے کا نام،
جُوں ہی کلال نے تیغ نکالی، لرزاں جسم تمام،
وہی چڑھائیں جام، جو سر کا سودا کر پائیں۔

[اصل بیت پڑھیں]
26

سر جدا ہیں جسم سے اور، دیگ میں جسم تمام،
حق ہے اِن کا جام، سر جو سجا کے لائیں۔

[اصل بیت پڑھیں]
27

انگ اُبلتی دیگ میں ہیں اور، کڑ کڑ کرے کڑھائی
زخموں کی رعنائی، دیکھ کے بھاگے بید۔

[اصل بیت پڑھیں]
28

مدرا پینے آئیں اِن سے، سر مانگے ہے ساقی،
جن کی مدرا بھٹی، وہ کچھ اور ہی مانگیں۔

[اصل بیت پڑھیں]
29

جو ہیں پریت کے مارے ان کو، کب ہے پیاری جان،
سجا کے سر وہ لے آتے ہیں، جان کریں قربان،
سر کا دے کر دان، بات کریں پھر عشق کی۔

[اصل بیت پڑھیں]
30

جو ہیں پریت کے مارے ان کو، کب ہے پیاری جان،
یار کی ایک جھلک کی خاطر، لاکھوں سر قربان،
میرا جسم یہ جان، یار کی خاکِ پا پہ صدقے۔

[اصل بیت پڑھیں]
31

سر کا صدقہ دے کر سائیں، پریتم گر مل جائے،
سستا سودا جان کر عاشق، سر اپنا کٹوائے،
قسمت جب بر آئے، تب ملتا ہے ساجن۔

[اصل بیت پڑھیں]
32

مے انمول کے اک قطرے کی، آس شہادت ہے،
یہ بھی عبادت ہے، گر ناز سے ساجن دیکھے۔

[اصل بیت پڑھیں]
وائي

پی کر مے کا جام، ساجن کو پہچان لیا،
عشق کے پیالے پی کر ہم نے، جانا بھید تمام،
انگ انگ میں پیار کی اگنی، سلگیں سب اندام،
جگ میں جینا دون دن کا ہے، دو دن کا ہے قیام،
کہے لطیف کہ تُو ہی تُو ہے، باقی تیرا نام۔

[اصل بیت پڑھیں]
تیسری داستان
1

مجھ کو چھوڑ گیا ہے ساجن، پریت کا روگ لگا کر،
ایسا درد وہ دے گیا دل کو، میرا یار وہ دلبر،
کوئی نہ چارہ گر، میرے من کو بھائے۔

[اصل بیت پڑھیں]
2

من کو اب نہ بھائے کوئی، پی بِن اور طبیب
وہ ہی یار حبیب، میرے حال کا ہادی ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
3

ہادی ہُوا حبیب وہ میرا، راہ نمائے راحت،
پی نے روگ مٹایا سارا، قائم ہوگئی نسبت،
ہم نےپائی صحت، روگ سے تیرے ہاتھوں۔

[اصل بیت پڑھیں]
4

اور طرح کا روگ لگے ہے، ہادی ہو جو حبیب،
ایسا روگ مِٹا نہ پائے، کوئی اور طبیب،
رہنما ہے رقیب، وہ ہی درد کا درماں ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
5

جب وہ چارہ ساز ہُوا تو، دُور ہُوا آزار،
گاہے بول سے رس گھولے اور، گاہے قہر کا وار،
اس کو ہی وہ گھائل کردے، جس کا ہو وہ یار،
صاحب رب ستار، وہ ہی من کی بیتا جانے۔

[اصل بیت پڑھیں]
6

پل پل جھن جھن باج رہے ہیں، رگ رگ تار رُباب،
میرے لب پر مہر لگی ہے، ساجن دے نہ جواب،
وہ جو میرے زخم کا مرہم، دل کو کرے کباب،
وہ ہی عین عذاب، وہی راحت روح کی ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
7

وہ بھٹکائے راہ دکھائے، عجب ہے اس کی عادت،
جس کو چاہے عزت دے اور جس کو چاہے ذلت۔

[اصل بیت پڑھیں]
8

کیا ہے درد کا کارن؟ پی نے چُھپ کر پوچھا،
درد کا درماں بخشا یار نے، مجھ کو پاس بلایا
"آخر العصر" پریتم نے فرمایا،
تب سے یہ من میرا، ترسے پی درشن کو۔

[اصل بیت پڑھیں]
9

دور سے بیٹھا کیوں ترسے ہے، جا اس یار کے دوار،
ٹھکرایا سنسار، جس نے دیکھا دوار پیا کا۔

[اصل بیت پڑھیں]
10

شیرینی سے شیریں تر ہے، میٹھا ہر ایک بول،
ساجن ہے انمول، چپ بھی پیار کی باتیں ہیں۔

[اصل بیت پڑھیں]
11

شیرینی ہی شیرینی ہے، جو کچھ پریتم دے،
دل سے گر چکھ لے، ذرا نہیں کڑواہٹ۔

[اصل بیت پڑھیں]
12

جان بوجھ کے پی نے تجھ سے، باندھا درد کا رشتہ،
پریت کے درد کی باتیں پیارے!، غیر کو مت بتلا۔

[اصل بیت پڑھیں]
13

جس کی چاہ میں تڑپ رہے ہو، وہ بھی تجھ کو چاہے،
فاذکرونی اذکرکم، پی کی بات سمجھ لے،
ایسا وہ پریتم ہے، شیرین لب اور ہاتھ میں خنجر۔

[اصل بیت پڑھیں]
14

پریتم نے اک بار پکارا، مہر سے مجھ برہن کو،
بس اس ایک سخن کو، سکھیو! دل دُہراتا ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
15

پیار سے پریتم نے پوچھا تھا، مجھ سے یہ اک بار،
" کیا میں تیرا رب نہیں ہوں؟"، میرا تھا اقرار،
درد کی تیز کٹار، تب سے دل میں اُتری ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
16

پوچھ رہے ہیں یار، پی نے باندھا کدھر نشانہ،
عشق کے بھالے برس رہے ہیں، خود کو کریں نثار،
دیکھ کہ کیسی سج دھج سے وہ آئیں سوئے دار،
سر دیتے ہیں وار، مر مٹنا تو پیا ملن ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
17

پاس بلا کر قتل کرے اور، پھر وہ پاس بلائے،
لاکھ گڑھے ہوں عشق کے بھالے، قدم لرز نہ پائے،
موت سے آنکھ ملائے، بھول کے علم و دانش کو۔

[اصل بیت پڑھیں]
18

پی کا پاس بلانا بھی تو، گویا ہے دھتکار،
جس کو کوئی سمجھ نہ پائے، ایسا اس کا پیار،
آس اسی کی یار!، جو توڑ کے ناتہ جوڑے۔

[اصل بیت پڑھیں]
19

قتل کرے تو مہر کرے اور، مہر سے قتل کرے وہ،
میری روح کی راحت ہے اور، میرا قاتل ہے وہ۔

[اصل بیت پڑھیں]
20

قتل کرے اور مہر سے یہ پھر وہ، پاس بلائے یار،
ہر دور میں اس کی عادت ہے، عجب ہے اس کا پیار،
زخم وہ دے ہر بار، وہ ہی روح کی راحت ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
21

پاس بلا کر گھائل کردے، ایسے ناز و ادا،
وہ ہی دار پر لٹکائے اور، جلائے روز پیا،
کریں برہ کا سودا، آجا تو بھی سودا کر لے۔

[اصل بیت پڑھیں]
وائي

ہوگا درد کا کا درماں، میرا یار حبیب سکھی ری!
درد کا آکر کرے مداوہ، مہر سے میرا سجناں،
میرے انگناں آ کر دیکھا، میرا حال پریشاں،
مجھ روگی کا روگ مٹایا، آن کے میرے انگنا،
کہے لطیف کہ تجھ سا جگ میں، اور طبیب نہ جاناں!

[اصل بیت پڑھیں]

سُر ایمن

پہلی داستان
1

تُو حبیب، تُو طبیب، تُو درد کی دوا
جانی! میرے جان کو ہے، روگ کیا لگا
تُو ہی دے شفا، صاحب! اہلِ دل کو۔

[اصل بیت پڑھیں]
وائي

بھولے بید بچارے، درد نہ جانیں دل کا،
چارہ سازو! لے جاؤ تم، اپنے نشتر سارے،
وہ ہی مہر کا مرہم دیں گے، دیں جو زخم نیارے،
جن کے ہجر کا درد ہے دل میں، وہ آئے آج دلارے۔

[اصل بیت پڑھیں]
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
13

موکھی مے فروش، اوچھی اس کی ذات
زہر پلا کر رات، مارا متاروں٭ کو!

(٭متارا: کرداروں کے نام)

[اصل بیت پڑھیں]
24

یار کا پایا درشن، دوست میرے گھر آیا،
جس کو دیکھے جگ بیتے تھے، آج وہ آیا ساجن،
ہجر کے بعد اب ملن ہوا ہے، مولا لایا ساجن،
دور دیس میں یار بسا تھا، آج وہ آیا آنگن،
کہے لطیف کہ مہر سے سائیں، گھر آیا وہ ساجن۔

[اصل بیت پڑھیں]
پانچویں داستان
چھٹی داستان
ساتویں داستان
آٹھویں داستان
1

کوچہِ یار میں روز کا جانا، کب اچھا ہے یار،
دھیان سے قدم اٹھاتا آ تُو، اپنے یار کے دُوار،
اپنے پیار کا بھید چھپالے، جان نہ لیں اغیار،
پریتم آن کریں گے خود ہی، دُور تیرا آزار،
آنگن آئے یار تو کرنا راز کی باتیں!

[اصل بیت پڑھیں]
وائي

یار سجن کا فراق، مجھ کو مار گیا ہے،
میرے سجن کے اور کئی ہیں، مجھ جیسے مشتاق،
ہر جا ہر سُو دھوم مچی ہے، ہر جا حُسن کی دھاک،
سرمہ جان کے اکھین ڈاروں، ان پیروں کی خاک،
کہے لطیف کہ ساجن میرا، سدا ہے سندر پاک.

[اصل بیت پڑھیں]

سُر کھنبھات

پہلی داستان
1

کتنا ہے گنوان، کیا کیا گُن گِنوائوں،
عیب کبھی نہ جتلائے وہ، مہر بھری ہے شان،
میں پاپن نادان، مہر ہی مہر ہے پریتم۔

[اصل بیت پڑھیں]
19

پریتم نے جب ناز و ادا سے، ڈالی ایک نظر،
سورج شاخیں جھک آئیں اور، کمہلایا قمر،
ماند ہوا ہر جوہر، دیکھ کے میرے پریتم کو۔

[اصل بیت پڑھیں]
وائي

پی کو آپ مناؤں، تو رات آکر نہ بیتے،
شمع کی صورت جل کر، خود کو میں پگھلاؤں،
جوں جوگی کی دھونی، سلگ سلگ جل جاؤں،
اپنے میت کی پیت بھلا، اور کو کیا سمجھاؤں،
دکھ ہے پریت کا پل پل، دکھ میں گھل گھل جاؤں،
میں تو یار ہوں سید کا، پورنتا میں پاؤں،
پریت میں دکھ ہی دکھ ہے، دکھ میں رچ بس جاؤں،
ویرانوں میں چمکوں، پریت پیا کی پاؤں،
پریتم ہے جب ایسا، میں محشر میں مسکاؤں۔

[اصل بیت پڑھیں]
دوسری داستان

سُر سری راگ

پہلی داستان
1

شاید پوچھے یار، لگا رہے یہ دھڑکا،
مانے اَمر جو اِس کا، رہے نہ خالی دامن۔

[اصل بیت پڑھیں]
3

ہر پل رہے یہ دھیان، شاید پوچھے پریتم،
دھو کر میلے بادباں، چمکا لے اب ہمدم،
رہ ہشیار تُو ہر دم، اُترے گا تو پار اے مانجھی!

[اصل بیت پڑھیں]
وائي

شکر بجا لاؤں میں کیسے، لاکھوں ہیں احسان،
حمد کر تو حکیم کی اور، کر عظمت تو بیان،
ظاہر باطن سب کچھ جانے، پائے جو اس سے گیان،
اس کی حمد و ثنا کو بھولے، کون ہے وہ نادان،
مَن کا منکا پھیرو سائیں!، پل پل اس کا دھیان،
اتنا درد بڑھا تو دل میں، ہو جائے ہلکان،
شاید اپنی مہر سے تجھ پہ، سائیں کرے احسان،
کھوٹ ہے جتنا دل میں دھولے، پالے سچا گیان،
صاحب کو بس سچ ہی بھائے، سچ کو تو پہچان،
سیس جھکانے والوں کا کب، کوئی کرے اپمان،
جو بھی اِس کے عشق میں جاگے، پالے نرالی شان،
یاد کرو تو یاد کرے وہ، فرمائے قرآن،
شکر کرو اللہ کا یارو، اور چھوڑو کفران،
سب کے عیب چھپائے ساجن، ایسا وہ گنوان،
اس سائیں کی حمد کرو تم، دل سے ہر ہر آن،
کیوں بیٹھا یوں وقت گنوائے، تائب ہو نادان،
لطف ہو لطیف کا تجھ پہ، پائے امن و امان۔

[اصل بیت پڑھیں]
وائي

مجھ میں تو موجود، میں تو ہوں نادان
مہر ہو جب جب گمراہوں پہ، آن کریں وہ سجود،
بھید بقا کا پا گے، ہوگئے جو نابود،
پریت کے مارے اِن نینن کے، نین تیرے مسجود،
وہ ہی تیرے دوار پہ پہنچے، بھول گئے جو وجود۔

[اصل بیت پڑھیں]
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان

سُر سامونڈی

پہلی داستان
1

بیٹھ تُو نیا پاس، نیّا گھاٹ بندھی ہے،
کر کے تُجھے نراس، چلا نہ جائے مانجھی۔

[اصل بیت پڑھیں]
وائي

کیسے جی بہلائوں، میرا من نہیں میرے بس میں۔
بادباں کو کھولا اس نے، نینن نیر بہاؤں،
بنجاروں سے پریت کا ناتہ، تڑپ تڑپ مرجاؤں،
دُکھ برہا کا دیمک جیسا، پل پل گھلتی جاؤں،
دکھ کی بیلیں لپٹیں تن کو، دکھ سے مکتی پاؤں
ہاتھ جوڑ اور پگ پگ چل کے، پی کے دوار میں جاؤں۔

[اصل بیت پڑھیں]
دوسری داستان
تیسری داستان

سُر سوہنی

پہلی داستان
1

دریا نالے، تیز بہاؤ، کیسا تیز ہے دھارا،
عشق جہاں پہ موجیں مارے، وہاں بہاؤ نیارا،
جن کو عشق ہے گہرائی سے، سوچ کا ساگر گہرا،
ملادے ساجن، مولا! جس سے من اٹکا ہے۔

[اصل بیت پڑھیں]
10

پنچھی آن چھپے پیڑوں میں، سورج ڈوبا، شام،
گونجی جب آذان چلی وہ، لے کر پی کا نام،
ڈھونڈے وہی مقام، جہاں ہے اس کا ساجن۔

[اصل بیت پڑھیں]
وائي

دے تو کوئی جواب، میں دور ہوں کیوں ساجن سے،
پاپ سے اپنا آپ بچالے، پھر کیا طلب ثواب،
نہ وہ زہد ہے نہ وہ تقویٰ، نہ ہی رنگ رباب،
خود سے ہی خوبی ہو حاصل، لگا دے گر لعاب،
پاپ پوترتا ہوجائے، کرے جو مہر جناب،
خاک کے آگے ہیچ میں سارے، اطلس و کمخواب،
جل میں جھلمل دمک رہے ہیں، جیون کے یہ حباب،
چل ہادی کے سنگ اے سائیں، کھلے کرم کا باب،
من کے چور پہ ایسے جھپٹ تُو، جیسے یار! عقاب،
کھول دے دل کے دروازے اب، کر نہ پی سے حجاب،
جوں ادغام ہو اعرابوں کا، یوں ہو وصل جناب،
لب پہ مہر ہو دل میں اگنی، جل کر دل ہو کباب،
ملے گی اِس کو مئے طہورا، مانگے جو مئے ناب،
مرض عشق میں برہن نے، کب اچھے دیئے جواب۔

[اصل بیت پڑھیں]
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
پانچویں داستان
چھٹی داستان
ساتویں داستان
آٹھویں داستان
نویں داستان
دسویں داستان

سُر سسئی آبری

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
پانچویں داستان
چھٹی داستان
ساتویں داستان
آٹھویں داستان
نویں داستان
دسویں داستان
گیارہویں داستان
ابیات متفرقہ

سُر معذوری

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
پانچویں داستان
چھٹی داستان
ساتویں داستان

سُر دیسی

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
پانچویں داستان
چھٹی داستان
ساتویں داستان

سُر کوہیاری

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
پانچویں داستان
چھٹی داستان

سر حسینی

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
پانچویں داستان
چھٹی داستان
ساتویں داستان
آٹھویں داستان
نویں داستان
دسویں داستان
گیارہویں داستان
بارہویں داستان

سُر لیلا چنیسر

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان

سُر مومل رانو

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
پانچویں داستان
1

شمع جلاتے شب، پو پھٹی پربھات،
تیری دید کو ےترسیں، نیناں، رانا! آجا اب،
تیری یار طلب، کاگ اڑاؤں کاک کے۔

[اصل بیت پڑھیں]
چھٹی داستان
ساتویں داستان
آٹھویں داستان
نویں داستان

سُر عمر ماروی

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
پانچویں داستان
چھٹی داستان
ساتویں داستان
آٹھویں داستان
نویں داستان
دسویں داستان
گیارہویں داستان
ابیات متفرقہ

سُر کاموڈ

پہلی داستان
دوسری داستان

سُر گھاتُو

پہلی داستان
1

ماہر تو سب الجھ گئے اور، بھٹکے عاقل سارے،
مل کر گئے وہ مہران کنارے پہنچے،
بھول گئے بے چارے، اگلی پچھلی باتیں۔

[اصل بیت پڑھیں]
وائي

لوٹ کے گھر نہ آئے، دور گئے منجھدار میں گھاتو،
نہنگ کو ایسے مارو یارو! اور کو پھر نہ ستائے،
جال کہاں کس جا ہے کشتی، کوئی تو کھوج لگائے،
کہے لطیف سنوری مانجھی!، ہر اک پار ہی جائے۔

[اصل بیت پڑھیں]

سُر سورٹھ

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان

سُر کیڈارو

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
پانچویں داستان
چھٹی داستان

سُر سارنگ

پہلی داستان
1

کہے لطیف کہ دیکھ تو بادل، چھائی کالی بدرا،
ریوڑ، ہانک کے لے آئی، رم جھم برسی برکھا،
چھوڑ کے کٹیا میدانوں میں، لاؤ سامان سارا،
والی ہے جو سب کا، آس رکھو اس مولا کی۔

[اصل بیت پڑھیں]
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
11

گرج چمک اور جھوم کے آئے، بدرا اب کی بار،
چم چم چمکے، گھن گھن گرجے، برسے میگھ ملہار،
جائیں استنبول کو بدرا، برسے مغرب پار،
چین دیس اور سمرقند پہ، برکھا کی یلغار،
برس رہے ہیں روم پہ بادل، کابل اور قندھار،
بھیگ چلے ہیں دہلی دکھن، بھیگ چلا گرنار،
جھوم کے جیسلمیر سے آئے، بیکانیر بکار،
بھیگا بھیگا "بھج" ہے سارا، "بھٹ" پہ بوند بہار،
ٹوٹ کے عمر کوٹ پہ برسی، ہر سو ہے ولہار،
میری سندھڑی پر بھی سائیں! رحمت ہو ہر بار،
دوست میرا دلدار، عالم سب آباد کرو.

[اصل بیت پڑھیں]

سُر آسا

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان

سُر رِپ

پہلی داستان
دوسری داستان

سُر کھاہوڑی

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان

سُر بروو

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان

سُر رامکلی

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان
پانچویں داستان
چھٹی داستان
ساتویں داستان
آٹھویں داستان
نویں داستان

سُر کاپائتی

پہلی داستان

سُر پورب

پہلی داستان
دوسری داستان

سُر کارایل

پہلی داستان
دوسری داستان

سُر پربھاتی

پہلی داستان

سُر ڈاہر

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان

سُر بلاول

پہلی داستان
دوسری داستان
تیسری داستان
چوتھی داستان